Hans Raj Lake

 Hans Raj Lake 

This lake is also located in Neelum Valley, Azad Kashmir. The lake was originally called Ratta Sar and is famous for the red mountains that surround it. 

There is also a red light pack in the area which has been used in geography surveys during the British rule. 

There are three labyrinthine packs in the area, one at Rati Gali, another at Sargan and a third at Kail. The name Hans Raj is due to the fame of Pakistan's greatest travel correspondent and tourist Sir Mustansir Hussain Tarar. 

The lake became famous. Since then, the lake has been called Hans Raj Lake. About two and a half hours from Rati Gali Lake Base Camp, the lake is located on the Rati Gali Pass, about 3900 meters high between Rati Gali and Noori Top

On the other hand, the famous Dodi Pat Sar of Kagan Valley can also be tracked through Saral Lake. In winter, the lake is covered with ice like other lakes in the Neelum Valley. ۔

 More about this source textSource text required for additional translation information



ہنس راج جھیل   ❤

 یہ جھیل بھی وادی نیلم آزاد کشمیر میں واقع ہے ۔ اصل میں اس جھیل کا مقامی نام رتہ سر تھا اور وجہ شہرت اسکے اطراف موجود لال رنگ کے پہاڑ ہیں ۔ نیز اس علاقے میں لال بُتی پیک بھی موجود ہے جسے برطانیہ راج کے دوران جغرافیے کے سروے میں استعمال کیا جاتا رہا ہے ۔

 اس علاقے میں تین لا بُتی پیکس ہیں ایک رتی گلی، دوسری سرگن اور تیسری کیل کے مقام پر ہے ۔ ہنس راج نام کی وجہ شہرت پاکستان کے سب سے بڑے سفر نامہ نگار اور سیاح سر مستنصر حسین تارڑ جب اس جھیل پر آے تو اس میں تیرتے گلیشیئر کے ٹکڑوں کو تیرتے ہنس راج سے مشابہہ قرار دیا اور اسے ہنس راج لکھا اور یہ جھیل ہنس راج جھیل مشہور ہوئی 

۔۔ تب سے یہ جھیل ہنس راج جھیل ہی کہلاتی ہے۔ رتی گلی جھیل  بیس کیمپ سے  لگ بھگ ڈیڑھ، دو گھنٹے کی مسافت پر واقع یہ جھیل رتی گلی اور نوری ٹاپ کے درمیان قریباً 3900 میٹر بلند رتی گلی پاس پر واقع ہے ۔

 جسکے دوسری جانب براستہ سرال لیک وادی کاغان کی مشہور  دودی پت سر کا ٹریک بھی کیا جاسکتا ہے۔ موسم سرما میں یہ جھیل بھی وادی نیلم کی دیگر جھیلوں کی مانند برف سے ڈھک جاتی ہے ۔ ۔

Post a Comment

Please don't enter any spam link in the comment box. Thanks.

Previous Post Next Post