Alcatel Pixi   Price Data

Alcatel Pixi   Price Data

Alcatel Pixi   Price Data

Mercury, Periodic table elements History,مرکری پیریاڈک ٹیبل کے عناصر

    اردو میں پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں
 

Mercury # Elements of the Periodic Table

Mercury which is called Mercury in Urdu is a transition element. Mercury is familiar to almost every servant as it is mostly used in thermometers. The thermometer is a device that measures temperature. But now instead of these thermometers most companies Digital thermometers are made because mercury is a very toxic chemical. Mercury is the only metal that is found in a liquid state. Its density is thirteen times higher than water, that is, it is thirteen times thicker than water. It is possible that insects can move on the surface of the water because the surface tension of water ie water forms a thin layer on its surface which is called surface tension of water but the surface tension of mercury is many times more than that. If a coin sinks in water, it is quite possible that it will not sink in Mercury because the density of Mercury is very high. Can you tell that Mercury came from Mg? It is actually derived from a Greek word hydrargyrum which It means "liquid silver" because its surface is shiny like silver

According to one estimate, the oldest specimen of Mercury was found in the Egyptian city of Canara, which is 3,500 years old. From here one can estimate how old Mercury was discovered. Mercury and its compounds have been around for centuries. They were familiar. When they used another "synabar" to get mercury, when it was burned at a thousand degrees Celsius, the mercury evaporated from it, which was cooled and brought to a liquid state.

Mercury chloride has been used by people for centuries as a pesticide and sometimes as a poison to kill humans. In addition, a compound called mercury chloride has been used to remove red marks on the skin. Like a lion

Please come for a long time

But only fifty years ago today, when it was learned about its harmful effects on the body, the commercial use of it and its compounder has decreased. One of its most toxic compounds, dimethyl mercury, killed a chemistry professor. Her name was Karen Wetterhan. This is from 1997 when she was trying to find out what heavy metals do to the environment and human health. There is an effect. But his death did make us aware of its dangerous and toxic effect.

The main use of mercury is in the preparation of chlorine. This is from 1892 when two chemists came up with a new method of separating chlorine from sodium chloride. Because if sodium chloride is dissolved in water and passed through it It is known that this will result in the formation of sodium and chlorine gas, but we also know that because sodium is highly reactive, it will immediately chemically react with water and emit hydrogen gas as a result. It will also emit a large amount of heat which will burn the formed hydrogen gas ie it will be an explosive reaction. How will we get the chlorine gas from it. The solution given by these two scientists is that the container in which the water It is filled with sodium chloride and a layer of mercury on the surface of the water. Now when current is passed through its equilibrium solution, since mercury is on the surface of the water, sodium can be stored because sodium does not chemically react with mercury. In this way we can get chlorine gas because now the explosion is good. There will be no action. But this method is no longer used because of the toxicity of mercury. Because if mercury enters the body through science, it affects the reactions in the blood and cells there, which causes our There is a possibility of kidney damage and it can lead to our death. But this is the case if you use Mercury as a medicine too much or Mercury vapors are inhaled in large quantities then it The effect can kill you in a week. Ninety percent of the mercury is obtained by distillation. Distillation refers to the extraction of two or more liquids based on their boiling points.

It is also used as an electronic switch because it is a good conductor of electricity.

In the 1980's, 1,000 tons of mercury were used each year to make mercury batteries. But now the number of mercury batteries has dropped significantly. The most important use of mercury is in fluorescent bulbs (CFLs). A fluorescent bulb is actually a bulb that is filled with mercury and argon gas and its surface is coated with phosphorus. As soon as the current is passed through this bulb, it gives energy to the vapor of mercury in it. Which emits ultraviolet rays which when exposed to phosphorus give phosphorous visible light ie the properties of phosphorus are that it starts to glow when exposed to ultraviolet radiations. The bulb that has the filament in it starts to heat up when the current is passed through it and it glows when the temperature rises too much. If you have a 75-watt incident bulb and If there is a 25-watt fluorescent bulb, both can give you equal light, which means that fluorescent bulbs use less energy than incandescent bulbs.

Mercury has seven naturally occurring isotopes. In addition, many of its isotopes have been artificially created. Used for When it enters the body, it reaches the brain and kidneys, emits radiation, and the pattern of these radiations, which is checked with the help of a device, is used to determine whether the brain and Kidneys are working properly or what is wrong with them.

The main use of mercury is in thermometers and barometers.

In addition, mercury chloride is still used as a poison today. Mercury sulfide is used to make red pigments, while mercury oxide is used to make mercury batteries.

Mercury is one of the twenty elements that are found in the least amounts in this planet. Spain is the country that gets the most amount of Mercury minerals, followed by Kazakhstan, Algeria and China etc. are included.


مرکری#پیریاڈک ٹیبل کے عناصر
مرکری جس کو اردو میں پارہ کہتے ہیں ایک ٹرانزیشن ایلیمنٹ ہے.مرکری سے تقریباً ہر بندہ واقف ہوگا کیونکہ اس کو زیادہ تر تھرمامیٹر میں استعمال کیا جاتا ہے.تھرمامیٹر سے مراد ٹمریچر ماپنے والا آلہ ہے.مگر اب ان تھرمامیٹر کی بجائے کمپنیاں زیادہ تر ڈیجیٹل تھرمامیٹر بناتی ہیں اس کی وجہ یہ ہے کہ مرکری بہت زہریلاہوتی کیمکل ہے.مرکری وہ واحد میٹل ہے جو مائع حالت میں پائ جاتی ہے.
اسکی ڈینسٹی پانی سے تیرہ گناہ زیادہ ہے یعنی یہ پانی سے تیرہ گنا گاڑھا ہوتا ہے.آپ نے دیکھا ہوگا کہ پانی کی سطح پر کیڑے چل سکتے ہیں اسکی وجہ ہے پانی کی سرفیس ٹینشن یعنی پانی اس اپنی سطح پر ایک پتلی تہہ بناتا ہے جس کو پانی کی سرفیس ٹینشن کہتے ہیں مگر مرکری کی سرفیس ٹینشن اس سے بھی کئ گنا زیادہ ہے.اگر ایک سکہ پانی میں ڈوب جاتا ہے تو یہ عین ممکن ہے کہ وہ مرکری میں نہ ڈوبے کیونکہ مرکری کی ڈینسٹی بہت زیادہ ہوتی ہے.کیا آپ کو بتا ہے کہ مرکری Mg سے آیا ؟یہ دراصل ایک یونانی لفظ hydrargyrum سے اخذ شدہ ہے جس کا مطلب ہے"مائع سلور"کیونکہ اس کی سطح سلور کی طرح چمکیلی ہے

ایک اندازے کے مطابق مرکری کا سب سے پرانا نمونہ مصر کے ایک شہر"کنرا" میں پایا گیا جو کہ 3500 سال پرانا ہے.یہاں سے اندازہ لگایا جاسکتا ہے کہ مرکری کی دریافت کتنی پرانی ہے.مرکری اور اس کے کمپاؤنڈز سے لووگ صدیوں سے واقف تھے.وہ لوگ مرکری کو حاصلرنے کے لیے اس کی ایک اور"سائنابار" کو جب ایک ہزار ڈگری سینٹی گریڈ پر جب جلایا, جاتا تو اس میں سے مرکری بخارات بن کر آڑ جاتا جس کو ٹھنڈا کر کے مائع حالت میں لایا جاتا.
مرکیورک کلورائیڈ کو لوگ صدیوں سے کیڑے مار ادویات اور بعض دفعہ اس کو بطور زہر انسان کو مارنے کے لیے استعمال کرتے تھے.اس کے علاوہ اس کا ایک کمپاؤنڈ مرکیورس کلورائیڈ کو جلد پر سرخ نشانات کو ختم کرنے کے لیے استعمال کیا جاتا رہا.مگر جس طرح ایک شعر ہے
بہت دیر کی مہرباں آتے آتے
مگر آج سے پچاس سال ہی قبل جسم پر اس کے مضر اثرات کے بارے میں علم ہوا تو اب اس کو اور اس پر مشتمل کمپاؤنڈر کا تجارتی پیمانے پر استعمال کم ہوگیا ہے. اس کا ایک بہت ہی زہریلا کمپاؤنڈ ڈائ میتھائل مرکری نے ایک کیمسٹری پروفیسر کی جان تک لے لی.اس کا نام کیرن ویٹرحان تھا.یہ 1997ء کا واقع ہے جس وہ یہ جاننے کی کوشش کررہی تھی کہ بھاری میٹلز کا ماحول اور انسانی صحت پر کیا اثر ہوتا ہے.مگر اس کی موت نے ہم کو اس کے خطرناک اور زہریلی اثر سے تو ضرور آگاہ کردیا.
مرکری کا اہم استعمال:
مرکری کا اہم استعمال کلورین کی تیاری میں ہے.یہ بات ہے 1892ء کی جب دو کیمسٹس نے کلورین کو سوڈیم کلورائیڈ سے الگ کرنے کا نیا طریقہ نکالا.کیونکہ اگر سوڈیم کلورائیڈ کو پانی میں حل کر کے اس میں سے کرنٹ گزارا جائے تو ہم کو یہ علم ہے کہ اس کے نتیجہ میں سوڈیم اور کلورین گیس بنیں گے مگر ہم یہ بھی جانتے ہیں کہ سوڈیم چونکہ بہت زیادہ ری ایکٹو ہوتا ہے اس لیے وہ فورا پانی سے کیمیائ تعامل کرے گا اور اس کے نتیجہ میں ہائیڈروجن گیس خارج کرے گا اور ساتھ بہت زیادہ مقدار میں ہیٹ بھی خارج کرے گا جو بننے والی ہائیڈروجن گیس کو جلادے گی یعنی یہ ایک ایکسپلوزو ری ایکشن ہوگا.جس سے ہم کلورین گیس کیسے مل پائے گی.ان دو سائنسداندانوں نے اس کا حل یہ دیا کہ جس کنٹینر میں پانی بھرا ہے اس میں سوڈیم کلورائیڈ کو ڈال کر پانی کی سطح پر مرکری کی تہہ چڑا دی جائے. اب جب اس کے ایکوئس سلوشن میں سے کرنٹ گزارا جائے گا تو چونکہ مرکری پانی کی سطح پر ہے لہذا سوڈیم کو محفوظ کیا جاسکتا ہے کیونکہ سوڈیم مرکری سے کیمیائ تعامل نہیں کرتا.اس طرح ہم کلورین گیس کو حاصل کرسکتے ہیں کیونکہ اب دھماکہ خیر ری ایکشن نہیں ہوگا.لیکن اب اس طریقہ کو استعمال نہیں کیا جاتا اس کی وجہ ہے-
 مرکری کا زہریلا پن:
 مرکری کا زہریلا پن.کیونکہ اگر مرکری سائنس کے ذریعہ جسم میں داخل ہوجائے تو وہاں یہ خون اور سیلز میں ہونے والی ری ایکشنز کو متاثر کرتی ہے جس سے ہمارے گردے خراب ہونے کا امکان ہے اور اس سے ہماری موت بھی وقوع ہوسکتی ہے.لیکن یہ ہے اس صورت میں اگر آپ مرکری کو بطور دوائ زیادہ استعمال کرتے ہیں یا مرکری کے بخارات بہت زیادہ مقدار میں سانس کے ذریعہ اندر چلے جائیں تو پھر اس کے اثر سے ایک ہفتہ میں آپ کی موت بھی ہوسکتی ہے.مرکری کا نوے فیصد حصہ ڈسٹلیشن طریقہ سے حاصل کیا جاتا ہے.ڈسٹلیشن سے مراد دو یا دو سے زیادہ مائع کو ان کے بوائلنگ پوائنٹس کی بنیاد پر حاصل کرنا ہے.
اس کے علاوہ اس کو الیکٹرانک سوئچ کے طور پر بھی استعمال کیا جاتا ہے کیونکہ یہ بجلی کا اچھا موصل ہے.
1980ء کی دہائ میں ہر سال 1000 ٹن مرکری کو مرکری بیٹریاں بنانے میں استعمال کیا جاتا رہا.مگر اب مرکری بیٹریوں کی تعداد میں کافی کمی آئ ہے.مرکری کا سب سے اہم استعمال فلویسنٹ بلب(CFL) میں ہے.
فلوریسنٹ بلب دراصل ایک ایسا بلب ہوتا ہے جس میں مرکری اور آرگون گیس بھری جاتی ہے اور اس کی سطح کو فاسورس سے کوٹیڈ کیا جاتا ہے.جسے ہی اس بلب میں سے کرنٹ گزارا جاتا ہے تو اس میں موجود مرکری کے بخارات کو انرجی دیتا ہے جس سے اس میں سے الٹروائیلٹ شعاعییں خارج ہوتی ہے جس فاسفورس سے جب ٹکراتی ہے تو فاسفورس وزیبل روشنی دیتا ہے یعنی فاسورس کی یہ خصوصیات ہے کہ جب اس پر الٹروائیلٹ ریڈی ایشنز پڑتی ہیں تو وہ چمکنا شروع کردیتا ہے.

یہ بلب انسڈینٹ بلب یعنی ایسا بلب جس میں فلامنٹ لگا ہوتا ہے جب اس میں سے کرنٹ گزارا جاتا ہے تو یہ گرم ہونا شروع ہوجاتا ہے اور جب بہت زیادہ ٹمریچر اس کا بڑھ جاتا ہے تو یہ گلو کرتا ہے.اگر آپ کے پاس 75 واٹ کا ایک انسیڈنٹ بلب ہے اور 25 واٹ کا ایک فلوریسنٹ بلب ہے تو دونوں آپ کو برابر روشنی دے سکتے ہیں جس کا مطلب یہی ہے کہ فلورسینٹ بلب کم انرجی استعمال کرتے ہیں بہ نسبت انسیڈنٹ بلب کے.
مرکری کے قدرتی طور پر سات آئسوٹوپس ہیں.اس کے علاوہ بھی مصنوعی طریقہ سے اس کے کئ آئسوٹوپس بنائے جا چکے ہیں.اس کے دو ریڈیو ایکٹو آئسوٹوپس یعنی مرکری-197 اور مرکری-203 کو طب کے شعبہ میں دماغ اور گردوں کا معائنہ کرنے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے.ان کو جب جسم میں داخل کیا جاتا ہے تو یہ دماغ اور گردے تک رسائ کرے ریڈی ایشنز خارج کرتے ہیں اور ان ریڈی ایشنز کا پیٹرن جس کو ایک آلہ کی مدد سے چیک کیا جاتا ہے وہ پیٹرن سے یہ اندازہ لگایا جاتا ہے کہ کیا دماغ اور گردے مناسب طریقہ سے کام کررہے ہیں یا ان میں کیا خرابی ہے.

مرکری کا اہم استعمال تھرمامیٹر اور بیرومیٹر میں ہے.
اس کے علاوہ آج بھی مرکری کلورائیڈ کو بطور زہر استعمال کیا جاتا ہے.مرکیورک سلفائیڈ کو سرخ رنگ کے پیگمنٹس جبکہ مرکیورک آکسائیڈ کو مرکری بیٹریاں بنانے میں استعمال کیا جاتا ہے.
مرکری کا شمار ان بیس عناصر میں ہوتا ہے جو سب سے کم مقدار میں اس کراہ ارض میں پائے جاتے ہیں.مرکری کی معدنیات سے سب سے زیادہ مقدار میں جو ملک حاصل کرتا ہے اس میں سپین سرفہرست ہے.اس کے بعد کازبکستان,الجیریا اور چائنہ وغیرہ شامل ہیں.

Post a Comment

Previous Post Next Post