What Is Okra

Bhindi Tori Okra (Tories):

 

Why is this fruit, also known as Lady Finger, actually called Okra? No date. Where did it come from No one knows Some historians believe that it is a product of the tropical and arid regions of Asia, some associate it with West Africa, some with the eastern African country of Ethiopia. When Spanish writers passed through Egypt in the twelfth century, they mentioned the fruit and wrote that young Egyptians were cooking and eating it. It is the best growing plant in dry temperate and arid hot region so it is possible that it reached from Ethiopia to West Asian countries (Middle East) via Red Sea and from there it came to Indo-Pakistan through Arab traders. 





When African slaves were transported to the United States in the 16th century, this plant was also introduced from Africa. Bhindi Tori is a cotton and chocolate plant from the Cocoa family. Yes! And the name of this family is Malvaceae. In addition to these fruits, many other fruits are members of this family and in total there are about 4225 generations of this family. There are also two types of okra, one green which you eat and one red okra. Ghiya Tori is not even remotely related to Bhindi, but Ghiya is actually from the Cucurbitceae family of bitter gourds and watermelons. There is no significant difference between the two species of okra except the color and the red ones turn green when ripe. India is also the number one producer in the international production of okra, followed by the African countries So Dawn and Nigeria. Pakistan ranks sixth on the list.

 

Benefits of Okra:

 


* Bhindi is a fruit scientifically but it is mostly used as a vegetable. Like all other fruits, it has the highest amount of water (83%) and contains adequate amount of potassium. The presence of both strengthens the heart by eliminating dehydration in the body.

 

* Lace comes out from inside the pot. It is actually full of fiber. Okra contains a good amount of fiber which satisfies hunger, not only cleans the blood vessels but also cleanses the body of bad cholesterol but also absorbs the waste products in the stomach and expels them out of the body.

 

* It contains Vitamin C and Magnesium, Vitamin C strengthens the immune system in the body, while Magnesium improves the human reproductive system by correcting blood flow in the body.

 

* Okra contains a good amount of folate which is actually very beneficial for women during pregnancy and is essential for the health of the baby. That is, Tori is good in pregnancy.

 

* It contains two antioxidants, catechin and quercitin. Antioxidants are chemicals that control and prevent the growth of free radicals in the body.

 

* Its seeds contain a special type of protein called lectin which is believed to protect against breast cancer. However, further research is still ongoing.

 

۰ In a laboratory test in 2011, diabetic rats were given oatmeal powder, which showed surprising results and the sugar level in the rats dropped drastically. However, such regular tests have not yet been performed on humans.

 

 


 

* Seeds don't end there. In the 18th century, when the civil war raged in the United States and states clashed, coffee makers cut off coffee supplies to Texas. In such a situation, the government there ordered to try different seeds and extract seeds like coffee. This was the seed of Bhindi which was used to make coffee and drink it. It is still made and drunk in many areas. The ripe dried seeds are roasted for a while, grinded like a powder, and boiled in hot water to make coffee. The special thing about this coffee is that it is Caffein Free. So people who don't drink caffeine can use this coffee or tea.

 

* Cook the bhandis quite simply, but it is still a perfectly balanced diet. Cook with meat, it is also good. The amount of protein will increase. Such cooking is good for those who go to the gym. Can also be made with gram but gram contains complex carbohydrates which can be a problem for gas sufferers. Okra lace is great for health because it contains fiber, but if you need to eliminate or reduce it, cook it with acidic vegetables such as tomatoes, onions, etc., which contain Citric Acid and Sulfonic Acid, respectively. It is usually cooked this way, but steamed greens are better than roasted tortillas and have better nutritional value.

 

* Bhindi also contains adequate amount of Vitamin K which thickens the blood which causes blood clots in the skin if it is cut somewhere. However, those who take Blood Thinner tablets should take Bhindi after consulting a doctor.

 

How to grow okra?

 

Okra is a plant that grows according to the season of Pakistan. Which can easily grow anywhere except in glacial areas. It is a very hardy and heat tolerant plant. It can withstand a lot of hardy soil and can stay without water for many days. Remove the dried seeds from the dried beans and plant them in pots or pots at appropriate distances. It can also be found in ordinary soils but the use of proper fertilizer improves the yield. Its characteristic is that you take off the fruit and it will bear fruit continuously until the summer is over. This fruit also starts bearing in two months Apply at least one to one and a half inches of water at a time. Even if Tori is not growing, if you plant its plant as a decoration, then so many beautiful flowers grow on it which are worth seeing. The month of April is about to begin.

 


This is a very low calorie fiber light food. Include it in your regular diet as it will keep the body active and eliminate obesity. Okra capsules are found in the United States and Europe and are drunk in many African countries. Lady Finger is undoubtedly an excellent food.




بھنڈی توری Okra (توریاں):

لیڈی فنگر (Lady Finger) کے نام سے جانا جانے والا یہ پھل دراصل Okra بھی کہلاتا ہے کیوں؟ کوئی تاریخ نہیں۔ کہاں سے آیا ؟ کوئی اتا پتا نہیں۔ کچھ تاریخ دان سمجھتے ہیں یہ ایشیا کے ٹراپیکل اور خشک علاقوں کی پیداوار ہے کچھ اس کا تعلق مغربی افریقہ سے جوڑتے ہیں تو کچھ افریقہ کے مشرقی ملک ایتھیوپیا سے۔ بارہویں صدی عیسوی میں اسپینی لکھاریوں کا مصر سے جب گزر ہوا تو انہوں نے اس پھل کا ذکر کیا اور لکھا کہ مصر کے نوجوان اسے پکا کر کھارہے تھے۔ یہ خشک مزاج اور خشک گرم علاقے میں بہترین اگنے والا پودا ہے تو ممکن ہے یہ ایتھیوپیا سے ہی مغربی ایشیائی ممالک (مڈل ایسٹ ) براستہ Red Sea پہنچا اور وہاں سے ہندو پاک میں عرب تاجروں کے ذریعے اس کی آمد ہوئی۔ افریقی غلاموں کو جب 16th صدی میں امریکہ پہنچایا جاتا رہا تو ساتھ میں اس پودے کو بھی وہاں افریقہ سے ہی متعارف کرایا گیا۔ بھنڈی توری کپاس اور چاکلیٹ کے پودے کوکوا Cocoa کے خاندان سے ہے۔ جی ہاں! اور اس خاندان کا نام Malvaceae ہے۔ ان پھلوں کے علاوہ اور بھی کئی پھل اس خاندان کے رکن ہیں اور کل ملا کر اس خاندان کی کوئی 4225 نسلیں ہیں۔ بھنڈی کی بھی دو اقسام ہیں ایک سبز جو آپ کھاتے ہیں اور ایک سرخ بھنڈی۔ گھیا توری کا بھنڈی سے دور دور کا بھی واسطہ نہیں بلکہ گھیا اصل میں کریلے اور تربوز کے خاندان Cucurbitceae سے ہے۔ بھنڈی کی دونوں نسلوں میں رنگ کے علاوہ کوئی خاص فرق نہیں اور سرخ والی بھی پک کر سبز ہوجاتی ہے۔بھنڈی کی بین الاقوامی پیداوار میں بھی بھارت سبقت لے کر پہلے نمبر پر ہے ، دوسرے اور تیسرے نمبر پر افریقی ممالک سو ڈان اور نائیجیریا ہیں جبکہ پاکستان کا اس فہرست پہ چھٹا نمبر ہے۔

بھنڈی کے فوائد:

۰ بھنڈی سائینسی لحاظ سے ایک پھل ہے لیکن اس کا بڑا استعمال بطور سبزی ہی ہوتا ہے۔ اس میں بھی باقی پھلوں کی طرح سب سے زیادہ مقدار تو پانی (83%) کی ہی ہے اور اس میں پوٹاشیم مناسب مقدار میں موجود ہے دونوں کی موجودگی جسم میں پانی کی کمی کو دور کرکے دل مضبوط کرتی ہے۔

۰بھنڈی کے اندر سے لیس سی نکلتی ہے۔ یہ دراصل فائیبر سے بھرپور ہے۔ بھنڈی میں اچھی خاصی مقدار میں فائیبر موجود ہے جو بھوک مٹاتا ہے، نہ صرف خون کی نالیاں صاف کرتا برے کولیسٹرول سے پاک کرتا ہے بلکہ معدے میں موجود فالتو برے مادوں کو اپنے اندر جذب کرکے اخراج کے ذریعے جسم سے باہر نکال دیتا ہے۔

۰ اس میں وٹامن سی اور میگنیسیم موجود ہے،وٹامن سی جسم میں قوت مدافعت کو مضبوط کرتا ہے جبکہ میگنیسیم جسم میں خون کے بہائو کو درست کرکے انسان کا تولیدی نظام بہتر کرتا ہے۔

۰ بھنڈی میں اچھی مقدار میں فولیٹ موجود ہے جو دراصل خواتین کو حمل کے دوران بہت فائدہ پہنچاتا ہے اور بچے کی صحت کے لئیے ضروری ہے۔ یعنی توری Pregnancy میں اچھی۔

۰ اس میں دو اینٹی آکسیڈینٹ Catechin اور quercitin پائے جاتے ہیں۔ اینٹی آکسیڈینٹ ایسے کیمیکل ہیں جو جسم میں بننے والے Free Radicals(کینسر بنانے والے سیلز) کو کنٹرول کرتے اور بڑھنے سے روکتے ہیں۔

۰ اس کے بیجوں میں ایک خاص قسم کا پروٹین Lectin پایا جاتا ہے جس کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ یہ Breast Cancer سے بچاتا ہے۔ تاہم اس پہ ابھی مذید تحقیق جاری ہے۔

۰ 2011 میں ایک لیبارٹری ٹیسٹ کے دوران شوگر زدہ چوہوں کو بھنڈی کے بیجوں کا پائو ڈر استعمال کرایا گیا جس کے حیران کن نتائج سامنے آئے اور چوہوں میں شوگر لیول انتہائی درجے تک کم ہوا۔ تاہم انسانوں پہ باقاعدہ ایسے ٹیسٹ ابھی تک نہیں ہوسکے۔

 

۰ بیجوں کی بات یہیں ختم نہیں ہوتی،اٹھارویں صدی میں جب امریکہ میں سول وار کا شور شرابہ تھا اور ریاستوں کاآپس میں ٹاکرا چل رہا تھا تو کافی بنانے والی ریاستوں نے ریاست ٹیکساس میں Coffee کی سپلائی بند کردی۔ ایسے میں وہاں کی حکومت نے حکم دیا کہ مختلف بیجوں کو آزمائو اور کافی جیسا بیج نکالو۔ یہ بیج بھنڈی کا ہی تھا جس کی کافی بنا کر پی جاتی رہی۔ ابھی بھی بہت سارے علاقوں میں اسکی کافی بنا کر پی جاتی ہے۔ پکے ہوئے خشک بیجوں کو تھوڑی دیر بھون کر ان کو پائو ڈر کی طرح پیس لیا جاتا ہے اور گرم پانی میں ابال کر کافی بنائی جاتی ہے۔ اس کافی کی خاص بات یہ ہے کہ یہ Caffein Free ہے۔ اس لئیے جو لوگ کیفین نہیں پیتے وہ اس کافی یا چائے کا استعمال کر سکتے ہیں۔

۰ بھنڈیوں کو بالکل سادہ بھی پکائیں تب بھی یہ ایک مکمل متوازن غذا ہے۔ گوشت کے ساتھ پکائیں، یہ بھی اچھا ہے پروٹین کی مقدار بڑھ جائے گی جم جانے والوں کے لئیے ایسے پکانا اچھا۔ چنے کے ساتھ بھی بنا سکتے ہیں لیکن چنے میں پیچیدہ کاربو ہائی ڈریٹ ہوتے ہیں گیس کی شکائیت والوں کو مسئلہ ہوسکتا ہے۔ بھنڈی کی لیس، صحت کے لئیے بہت اچھی ہے کیونکہ اس میں فائیبر ہے لیکن آپ نے اسے ختم یا کم کرنا ہو تو تیزاب رکھنے والی سبزیوں مثلاً ٹماٹر پیاز وغیرہ کے ساتھ پکائیں جن میں بالترتیب Citric Acid اور Sulfonic Acid ہوتا ہے۔ عام طور پر اسی طریقے سے پکائی جاتی ہے لیکن بھنی ہوئی توری کی نسبت ابلی ہوئی سبز سبز زیادہ اچھی اور اس میں غذائیت بہتر انداز میں موجود رہتی ہے۔

۰ بھنڈی میں وٹامن K بھی مناسب مقدار میں موجود ہے جو خون کو گاڑھا کرتا ہے جس سے کسی جگہ کٹ لگ جائے تو جلد خون جمتا ہے تاہم Blood Thinner گولیاں کھانے والوں کو ڈاکٹر سے مشورہ کرکے بھنڈی کھانی چاہئیے۔

بھنڈی کیسے اگائی جائے؟

بھنڈی پاکستان کے موسم کے عین مطابق اگنے والا پودا ہے۔ جو سوائے برفانی علاقوں کے تمام جگہوں پر باآسانی اگ سکتا ہے۔ یہ بڑا سخت جان اور گرمی برداشت کرنے والا پودا ہے۔ یہ تھور ذدہ زمین بھی برداشت کر لیتا ہے اور کئی دن بنا پانی کے رہ سکتا ہے۔ اسکی خشک پھلیوں سے خشک بیج نکال کر مناسب فاصلے سے کیاری یا گملوں میں لگا دیں۔ یہ عام مٹی میں بھی لگ سکتا ہے تاہم مناسب فرٹئیلائیزر کا استعمال پیداوار بہتر کرتا ہے۔ اسکی خاصیت یہ ہے کہ آپ پھل اتارتے جائیں اور یہ لگاتار پھل دیتا جائے گا جب تک گرمیاں ختم نہیں ہوتیں۔ یہ پھل بھی دو مہینوں میں دینا شروع کردیتا ہے اسکو ہفتے میں ایک بار کم از کم ایک سے ڈیڑھ انچ پانی لگائیں۔ توری نہ بھی اگانی ہو آپ اسکے پودے کو بطور سجاوٹ بھی لگادیں تو اس پر اتنے خوبصورت پھول اگتے ہیں جو دیکھنے لائق ہوتے ہیں۔ اپریل کا مہینہ شروع ہونے والا ہے ابھی لگا ڈالیں۔

یہ انتہائی کم کیلوریز والی فائیبر سے بھرپور ہلکی پھلکی غذا ہے۔ اسکو باقاعدہ خوراک میں شامل کریں یہ جسم کو چست اور موٹاپا دور کردے گی۔ امریکہ اور یورپ میں بھنڈی کے بنے ہوئے کیپسول مل رہے ہیں اور بہت سارے افریقی ممالک میں اس کا جوس بنا کر پئیا جاتا ہے۔بلا شبہ Lady Finger ایک بہترین غذا ہے۔

 

 

 


Post a Comment

Please don't enter any spam link in the comment box. Thanks.

Previous Post Next Post