Alcatel Pixi   Price Data

Alcatel Pixi   Price Data

Alcatel Pixi   Price Data

شہزادوں کی مجلس مسلم لیگ Council of Princes Muslim League

    اردو میں پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں
 

Council of Princes  

The position of the Muslim League was to make the maximum part of Pakistan territory. Most were undivided Punjab (which included Amritsar), undivided Bengal (including Calcutta), Northwest Frontier Province, Balochistan and Sindh. Some wanted even more, including a corridor connecting the two parts of Pakistan besides Assam, including Delhi, the capital of the Mughal Empire, the former Nawabi state of Odh, the Muslim-majority Nawabi state of Rampur and Sher Shah Suri. The capital was also Patna. (This claim was jokingly called "Jinnahistan").

On the other hand, the desire of the Congress was contrary to that of the Muslim League. The first priority was undivided India, but by the beginning of 1947, the Congress had accepted that partition was inevitable. Now India was trying to keep as much territory as possible. In addition to the division of Punjab and Bengal, the states of Jammu and Kashmir, Travancore and Hyderabad were to be acquired. By the beginning of 1947, the British had made it clear to the local Rajas that their personal capitals would cease. They decide to meet someone from India or Pakistan.

The top priorities for Pakistan in these states were Bahawalpur, Jammu and Kashmir and Kalat. Apart from this, efforts were made to connect Junagadh, Hyderabad and Bhopal among the states far from Pakistan. Broda, Indore and Travancore were also contacted. "Who is willing to pay a high price?" This was an important criterion for the rulers of many states. An example of this was Jodhpur. It was an overwhelmingly Hindu-majority state in central India, with Nawabs as Hindus, but Nawabs kept talking about accession to get good offers from both sides. Finally, after intense pressure and generous pricing, India's accession was announced just a week before independence.

.. .. .. .. .. ...

The state of Kashmir was one of the most important of these chess pieces. Although it was a matter of the entire state, the most important of these was the famous Kashmir Valley, where 93% of the population was Muslim.

On the other hand, the population of the eastern part of the state was mostly Provenڈal. It included four districts of Jammu and Ladakh district.

One possible solution could be to divide Kashmir on the lines of Punjab and Bengal. The situation was similar in Punjab and Bengal. But no such proposal came from anyone in 1947. What was the reason Because according to the principles laid down for the partition of India, it was clear that the decision had to be made by the Maharaja. The Maharaja would not have been contacted by Pakistan and Hari Singh was hesitant about it. Ways of associating maharajas with them were used through intimidation, greed, seduction and bullying. India took the initiative at least a year ago.

...

On July 25, 1947, three weeks before leaving the subcontinent, Lord Mountbatten, addressing the Chamber of Prince of the Local Governing Body, stated that after leaving Britain, he would belong to only two states. India and Pakistan. Not from any other state. Nawab, look at your geography and decide for yourself according to the wishes of your people.

.. .. .. .. .. ...

When Pakistan was formed, the fact was that there were many Indians who thought that this independent state would not last long and would soon be absorbed back into India. Against such an expectation, Pakistan soon emerged as a powerful state. The subsequent separation of its two parts may have been inevitable, but apart from this, Pakistan has been facing great adversity and difficulties in the best possible way. Today, seven decades later, there is hardly anyone who doubts that this country will last very long. This fact was soon accepted in post-independence India as well. Except for a few extremist right-wing Hindus, "Unified India" has never been a serious concept.

۔ ...

Now the states had to decide their future. The rulers of Travancore, Hyderabad and Kashmir had the greatest desire to maintain their personal states. The ruler of Trancor soon realized the truth and reached an agreement. The issue of Junagadh (and its sub-state of Manavadar), Hyderabad and Jammu and Kashmir was not settled till Independence Day.

...

The acquisition of states by both India and Pakistan was a politically divisive affair in which no one could claim any coherent position or moral superiority. Like any political issue, it was full of double standards.

In Junagadh, the Muslim Nawab annexed the Hindu-majority state to Pakistan. Pakistan accepted immediately. The situation was similar in Jammu and Kashmir, where Pakistan's objection was to a decision made without consulting the local population. India, on the other hand, refused to recognize the Nawab's accession, calling it unacceptable. While Pakistan did the same about the accession of Jammu and Kashmir. The third is that India killed Junagadh. Pakistan did the same in Jammu and Kashmir. Fourth, India held a referendum. This was promised in Jammu and Kashmir but it was not done there. Fifth, the Nawab of Junagadh formed an interim rebel council in India. The same happened to those who rebelled against the Maharaja in Azad Kashmir.

In Hyderabad, the Nawab tried to be independent. He tried to buy the port of Goa from Portugal in order to break the dependence on India. In November 1947, the Standalone Agreement was signed. The uprising against the system in the state began in September 1948 After that the army assassinated and captured the state. Here India refused to recognize the right of the state ruler. This was contrary to the Indian position taken in Jammu and Kashmir. Second, India used economic power against Hyderabad (its economic rationalization) while criticizing Pakistan for doing the same in Jammu and Kashmir. The third is the use of military force. Fourth, he did not promise a referendum here. On the other hand, the objection raised on Jammu and Kashmir for Pakistan was that it was a "clear decision based on the aspirations of the people". In Hyderabad, the situation was the opposite. The "Hyderabad Question" was considered by the UN Security Council in 1948 and 1949, but to no avail. Hyderabad was a regional and political region of India. The matter was soon settled. (It was last discussed at the United Nations on May 24, 1949).

(If you are a strict pro-India or pro-Pakistan (or anti-India or anti-Pakistan) then you will ignore your double standard and criticize others. And if not then you will have recognized that this is how politics is.) ۔

.. .. .. .. ...

By the time Independence Day came, all the rulers of the present states of India except Hyderabad, Jammu and Kashmir, Junagadh, Manavadar and Mangrol had signed the Treaty of Accession. Pakistan was waiting to be formally annexed. Amb, Bahawalpur, Chitral, Dir, Kalat, Khairpur, Kharan, Lasbela, Makran and Swat have been agreed to join Pakistan. The last state was Kalat, which was annexed on March 27, 1948.

And before we go back to Kashmir, let's take another small turn and take a look at this last annexation from Pakistan, which will show us how complicated and difficult these decisions were.

 

Attached is a picture of the time when these Nawabs met in March 1941. This chamber of princes was dissolved after July 25, 1947.


شہزادوں کی مجلس (۲۱)
مسلم لیگ کا موقف زیادہ سے زیادہ حصے کو پاکستان کا علاقہ بنانے کا تھا۔ زیادہ سے زیادہ میں غیرمنقسم پنجاب (جس میں امرتسر بھی تھا)، غیرمنقسم بنگال (جس میں کلکتہ بھی تھا)، شمال مغربی سرحدی صوبہ، بلوچستان اور سندھ تھے۔ کچھ نے اس سے بھی زیادہ کی خواہش کی تھی، جس میں آسام کے علاوہ پاکستان کے دو حصوں کو آپس میں ملانے کی راہداری بھی تھی جس میں مغل سلطنت کا دارلحکومت دہلی، سابق نوابی ریاست اودھ، مسلم اکثریت کی 
نوابی ریاست رامپور اور شیرشاہ سوری کا دارالحکومت پٹنہ بھی تھا۔ (اس دعوے کو مزاحاً “جناحستان” کہا گیا تھا)۔

دوسری طرف کانگریس کی خواہش مسلم لیگ سے برعکس تھی۔ اولین ترجیح غیرمنقسم انڈیا رہی لیکن 1947 کی ابتدا تک کانگریس نے اس بات کو قبول کر لیا گیا تھا کہ تقسیم ناگزیر ہے۔ اب زیادہ سے زیادہ علاقہ انڈیا کے پاس رکھنے کی کوشش تھی۔ اس میں پنجاب اور بنگال کی تقسیم کے علاوہ جموں و کشمیر، تراونکور اور حیدرآباد کی ریاستیں حاصل کرنا تھا۔ 1947 کے آغاز تک برٹش نے مقامی راجوں پر واضح کر دیا تھا کہ ان کی ذاتی راج دہانیاں باقی نہیں رہنے والی۔ وہ انڈیا یا پاکستان میں سے کسی کے ساتھ ملنے کا طے کر لیں۔

پاکستان کے لئے ان ریاستوں میں بڑی ترجیحات بہاولپور، جموں و کشمیر اور قلات تھیں۔ اس کے علاوہ پاکستان سے دور ریاستوں میں سے جوناگڑھ 
 حیدرآباد اور بھوپال کو ملانے کی کوشش کی گئی۔ برودا، اندور اور تراونکور سے بھی رابطہ کیا گیا۔ “کون بڑی قیمت لگانے کو تیار ہے؟” بہت سی ریاستوں کے حکمرانوں کے لئے یہ اہم معیار تھا۔ اس میں ایک مثال جودھپور کی تھی۔ یہ ہندوستان کے وسط میں واقع بھاری ہندو اکثریت کی ریاست تھی جس کے نواب ہندو تھے لیکن الحاق کے بارے میں نواب دونوں طرف سے اچھی آفر لینے کے لئے بات کرتے رہے۔ بالآخر، شدید دباوٗ اور فراخدلانہ قیمت لگائے جانے کے بعد انڈیا سے الحاق کا اعلان آزادی سے صرف ایک ہفتہ پہلے کیا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شطرنج کی بساط پر پڑے ان مہروں میں کشمیر کی ریاست اہم تھی۔ اگرچہ معاملہ پوری ریاست کا تھا لیکن اس میں سے اہمیت مشہور وادی کشمیر کی رہی ہے جہاں کے رہائشیوں میں 93 فیصد مسلمان تھے۔
دوسری طرف اس ریاست کے مشرقی علاقوں کی آبادی زیادہ تر پروانڈیا تھی۔ اس میں جموں کے چار اضلاع اور لداخ ڈسٹرکٹ شامل تھے۔
ایک ممکنہ حل کشمیر کی پنجاب اور بنگال کی طرز پر تقسیم کئے جانے کا ہو سکتا تھا۔ پنجاب اور بنگال میں بھی ایسی ہی صورتحال تھی۔ لیکن کسی کی طرف سے بھی 1947 میں ایسی کوئی تجویز نہیں آئی۔ وجہ کیا تھی؟ اس لئے کہ تقسیمِ ہند کے طے کردہ اصولوں کے مطابق یہ واضح تھا کہ فیصلہ مہاراجہ نے کرنا ہے۔ پاکستان کی طرف سے مہاراجہ سے رابطے نہیں کئے گے تھے اور ہری سنگھ اس بارے میں ہچکچا رہے تھے۔ مہاراجوں کو اپنے ساتھ ملانے کے طریقے دھمکی، لالچ، بہلانا پھسلانا، دھونس استعمال کئے جاتے تھے۔ انڈیا اس بارے میں پہل کم از کم ایک سال قبل کر چکا تھا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
برِصغیر چھوڑنے سے تین ہفتے قبل 25 جولائی 1947 کو لارڈ ماوٗنٹ بیٹن نے مقامی حکمرانوں کی اسمبلی چیمبر آف پرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ برطانیہ جانے کے بعد صرف دو ریاستوں سے تعلق رکھے گا۔ انڈیا اور پاکستان۔ کسی بھی اور ریاست سے نہیں۔ نواب اپنا جغرافیہ دیکھ کر اور اپنے لوگوں کی خواہشات کے مطابق خود فیصلہ کر لیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جس وقت قیامِ پاکستان ہوا تو حقیقت یہ ہے کہ بہت سے انڈین ایسے تھے جن کا خیال تھا کہ یہ آزاد ریاست زیادہ عرصہ قائم نہیں رہے گی اور جلد واپس انڈیا میں جذب کر لی جائے گی۔ ایسی کسی توقع کے خلاف پاکستان بہت جلد ایک طاقتور ریاست بن کر ابھرا۔ اس کے اپنے دو حصوں کا بعد میں الگ ہو جانا تو شاید ناگزیر تھا لیکن اس معاملے کو چھوڑ کر، پاکستان بڑے نامساعد حالات اور مشکلات کا بہترین طریقے سے سامنا کرتا رہا ہے۔ آج سات دہائیاں گزر جانے کے بعد شاید ہی کوئی ہو جسے اس میں شک ہو کہ یہ ملک بہت طویل عرصہ باقی رہے گا۔ آزادی کے بعد بھارت میں بھی بہت جلد اس حققیت کو قبول کر لیا گیا تھا۔ ماسوائے، چند ایک انتہاپسند رائٹ ونگ ہندووٗں کے، “اکھنڈ بھارت” سنجیدہ تصور کبھی بھی نہیں رہا
۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب ریاستوں نے اپنے مستقبل کا فیصلہ لینا تھا۔ تراونکور، حیدرآباد اور کشمیر کے حکمرانوں کی اپنی شخصی ریاستیں برقرار رکھنے کی سب سے زیادہ خواہش تھی۔ ترانکور کے حکمران نے جلد حقیقت کا ادراک جلد کر کے معاہدہ کر لیا۔ جوناگڑھ (اور اسکی ذیلی ریاست مناوادر)، حیدرآباد اور جموں و کشمیر کا معاملہ یومِ آزادی تک طے نہیں ہوا تھا۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
انڈیا اور پاکستان، دونوں کی طرف سے ریاستوں کا حاصل کرنا سیاسی داوٗپیچ والا کام تھا جس میں کسی باربط موقف یا اخلاقی برتری کا دعوٰی کوئی نہیں کر سکتا۔ کسی بھی سیاسی معاملے کی طرح اس میں دہرے معیاروں کی بھرمار تھی۔
جوناگڑھ میں مسلمان نواب نے ہندو اکثریت کی ریاست کا الحاق پاکستان کے ساتھ کر دیا۔ پاکستان نے فوراً قبول کر لیا۔ یہی صورتحال جموں و کشمیر میں اس سے برعکس تھی، جہاں پاکستان کا اعتراض مقامی آبادی سے رائے لئے بغیر کیا جانے والا فیصلہ تھا۔ دوسری طرف انڈیا نے نواب کے الحاق کو تسلیم کرنے سے انکار کر دیا اور اسے ناقابلِ قبول قرار دیا۔ جبکہ پاکستان نے ایسا ہی جموں و کشمیر کے الحاق کے بارے میں کیا۔ تیسرا یہ کہ انڈیا نے جوناگڑھ پر فوج کشی کی۔ پاکستان نے جموں و کشمیر میں یہی کیا۔ چوتھا یہ کہ انڈیا نے لوگوں کی رائے کے لئے استصوابِ رائے کروایا۔ اسی کا وعدہ جموں و کشمیر میں کیا لیکن وہاں یہ نہیں کروایا گیا۔ پانچواں یہ کہ جوناگڑھ کے نواب سے باغیوں کی عبوری کونسل انڈیا میں بنی۔ ویسی ہی مہاراجہ سے بغاوت کرنے والوں کی آزاد کشمیر میں بنی۔
حیدر آباد میں نواب نے آزاد رہنے کی کوشش کی۔ گوا کی بندرگاہ کو پرتگال سے خریدنے کی کوشش کی تاکہ انڈیا پر انحصار توڑا جا سکے۔ نومبر 1947 کو سٹینڈسٹل ایگریمنٹ (جوں کا توں رہنے کا معاہدہ) کیا۔ ستمبر 1948 میں ریاست میں نظام کے خلاف شروع ہونے والی بغاوت کے بعد فوج کشی کر کے ریاست پر قبضہ کر لیا۔ یہاں پر انڈیا نے ریاستی حکمران کے حق کو تسلیم کرنے سے انکار کر دیا۔ یہ جموں و کشمیر میں لئے گئے انڈین موقف سے متضاد تھا۔ دوسرا یہ کہ انڈیا نے حیدرآباد کے خلاف اکانومک پاور استعمال کی (اس کے معاشی ناطقہ بندی کر دی گئی) جبکہ یہی کام جموں و کشمیر میں کرنے پر پاکستان پر نکتہ چینی کی۔ تیسرا یہ کہ فوجی طاقت استعمال کی۔ چوتھا یہ کہ یہاں پر استصوابِ رائے کا وعدہ نہیں کیا۔ جبکہ دوسری طرف پاکستان کے لئے جموں و کشمیر پر اعتراض یہ اٹھایا گیا کہ یہ “واضح موقف عوام کی امنگوں کے مطابق فیصلہ” تھا۔ جبکہ حیدرآباد میں موقف اس کے متضاد اختیار کیا۔ اقوامِ متحدہ کی سیکورٹی کونسل میں 1948 اور 1949 میں “حیدرآباد کوئسچن” زیرِغور آیا لیکن اس پر کوئی نتیجہ نہیں نکلا۔ حیدرآباد انڈیا کے علاقائی اور سیاسی علاقے میں تھا۔ یہ معاملہ جلد ختم ہو گیا۔ (اقوامِ متحدہ میں اس پر آخری بار 24 مئی 1949 میں بات کی گئی)۔
(اگر آپ سخت پرو انڈیا یا پروپاکستان ہیں (یا پھر اینٹی انڈیا یا اینٹی پاکستان) تو اپنے ڈبل سٹینڈرڈ کو نظرانداز کر کے دوسرے پر تنقید کریں گے۔ اور اگر ایسا نہیں تو آپ پہچان چکے ہوں گے کہ سیاست تو ایسے ہی ہوتی ہے)۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جب تک یومِ آزادی آیا تو انڈیا میں موجودہ ریاستوں میں سے حیدرآباد، جموں و کشمیر، جوناگڑھ، مناوادر اور منگرول کے سوا تمام حکمران الحاق کے معاہدوں پر دستخط کر چکے تھے۔ پاکستان سے باقاعدہ الحاق کرنے کے لئے پاکستان کے قیام کا انتظار تھا۔ امب، بہاولپور، چترال، دیر، قلات، خیرپور، خاران، لسبیلہ، مکران اور سوات کا پاکستان سے الحاق کا معاملہ طے ہو گیا۔ آخری ریاست قلات کی تھی جس کا الحاق 27 مارچ 1948 کو ہوا۔
اور کشمیر کی طرف واپس جانے سے پہلے ہم ایک اور چھوٹا سا موڑ لیتے ہیں اور ایک نظر پاکستان سے ہونے والے اس آخری الحاق پر ڈالتے ہیں جو ہمیں دکھائے گا کہ یہ فیصلے کس قدر پرپیچ اور دشوار تھے۔
 ساتھ لگی تصویر اس وقت کی جب یہ نواب مارچ 1941 میں اکٹھے ہوئے تھے۔ شہزادوں کا یہ چیمبر پچیس جولائی 1947 کے بعد تحلیل کر دیا گیا۔

Post a Comment

Previous Post Next Post